ایک لفظ مختلف تلفظ

اردو میں بہت سے الفاظ ایسے ہیں جن کے دو تلفظ ہیں اور دونوں فصیح۔ ایسے الفاظ میں نشتر، چراغ شامل ہیں جو زیر اور زبر دونوں کے ساتھ درست ہیں۔ کیا آپ ایسے مزید الفاظ بتا سکتے ہیں؟

تبصرے

  • موسَم اور موسِم ، اصلاً لفظ موسِم تھا جو اردو میں آکر موسَم ہوگیا۔ یوں یہ دونوں تلفظ ہی درست قرار پاتے ہیں۔

  • الفاظ ایک زبان سے دوسری زبان میں جا کر صوتی اور معنوی اعتبار سے بدل جاتے ہیں، لیکن پھر بھی بعض لوگ اصرار کرتے ہیں کہ لفظ عین مین اسی طرح بولا جائے جیسے وہ اصل زبان میں تھا۔

  • میری رائے میں جو لفظ اردو میں آگیا وہ اردو کا ہو گیا۔۔، اب دوسری زبان والے اس کو جیسے چاہے بولیں اردو والے اس کو اپنے حساب سے لکھیں اور بولیں گے۔۔۔ یہ جو آج کل اچھے خاصے رمضان کو رامادان بنا دیا گیا ہے اس سے مجھے سخت کوفت ہوتی ہے۔۔

  • شاہد صاحب، میں آپ کی بات سے سولہ آنے متفق ہوں۔ اب مثال کے طور پر لفظ لالٹین کو لے لیجیے، کتنا خوبصورت لفظ ہے، اب اگر کوئی اصرار کرے کہ نہیں، یہ غلط ہے، اصل لفظ لینٹرن ہے، تو اسے بدذوقی ہی کہا جا سکتا ہے۔

  • July 2016 کو ترمیم کیا

    السلام علیکم ! ایک زبان کا لفظ جب بھی کسی دوسری زبان میں داخل ہوتا ہے تو اس زبان کی تہذیبی روایت سے وہ ضرور متاثر ہوتا ہے اہل زبان اسے اپنے مزاج کے مطابق اپناتے ہیں اور جب یہ لفظ ایک نئے مزاج و تہذیب کے ساتھ نئی زبان میں اپنا رچاؤ پیدا کر لیتا ہے تو پھر وہ اسی صورت میں اس زبان کا حصہ بن جاتا ہے ایسے الفاظ کو اپنی اصل زبان کے تلفظ کے مطابق بولنے پر زور دینا زیادتی ہی ہے ۔۔ البتہ میرے نزدیک جب دونوں زبانوں ( لفظ دینے اور لفظ لینے والی) میں بذات خود تہذیبی اور مزاجی ہم آہنگی ہو وہ ایک دوسرے کی مزاج آشنا ہوں اور ان میں کوئی مغائرت یا اجنبیت نہ ہو تو پھر کسی لفظ کے اصلی تلفظ کو مجروح کرنا بھی زیادتی ہوگا

  • جِدوجَہداور جِدوجُہد

  • Salam ! Doosri zaban say liay gae alfaz zaroorat k teht apna talafuz aur maana badaltay hain. Maslan, school ko urdu main iskool is liay likha/parha jata hai keh urdu zaban alfaz k aghaz main 'consonant cluster' Naheen hotay . Nateejatan urdu bolnay walay log seen aur kaaf ke awaz ikhay adaa kr he nai skatay. Issi tarah alfaz apnay mataalib bhi tabdeel kr laity.hain. hamain asal aur naqal k chakar main nahee parna chaahiay jub tak keh us tallafuz say matlab badal janay ka khadsha na ho Jasay muntazir aur muntazar aur Issi qabeel ka baaqi alfaz waghaira.
  • عثمان صاحب دوسری زبانوں سے آنے والے الفاظ کو کسی قدر رعایت دی جاسکتی ہے بالخصوص جب ان کا تلفظ اردو قواعد سے متصادم ہو، بہرحال تلفظ کی یکسانی ضروری ہے۔ یوں تو اسکول ہی نہیں سکول (مفتوح بہ س ) بھی لکھا بولا جاتا ہے اور یہی معاملہ اسٹیشن، اسٹار، اسٹیٹ جیسے لفظ کے ساتھ بھی ہے۔ یہاں اب میں یہ بھی عرض کردوں کہ اب جس طرح انگریزی ہمارے معاشرے میں اپنی جگہ بنا چکی ہے تو وہ بچے جو کسی قدر پڑھ لکھ گئے ہیں وہ اب انگریزی یا ہندی الفاظ کے پہلے ساکن حروف ادا کرلیتے ہیں اور یہ معیاری سمجھا جاتا ہے۔
    اب کسی پڑھے لکھے فرد سے یہ توقع نہیں کی جاتی کہ وہ اسکول یا سکول (مفتوح بہ س) کا تلفظ ادا کرے۔

  • Dar asal to mamla he us zaban k Bolnay walon ka hai jo koi lafz "borrow" karti hai. Kun keh wo awaz ya awazon ka majmooa agar borrow krnay wali zaban main mojood nahee to majbooran un ko apni zaban k.mutabik dhalna parta hai. Aur Urdu main aksar alfaz he doosri zabano say liay gae hain. Jasay "chapa aur sabun" waghaira purtagali say.liay gae hain. Agar hum is uljhan main paray rahay keh asal kia hai.aur asal talafuz aur meaning kia hain to phir aik lafz jis zaban say hum tak poncha hai us say.pehlay bhi kissi zaban say aaya ho Ga. Us ko daikha jaaiy. Yoon ye behas na khatam honay wali hai. English / urdu main aik lafz lieutenant istimal hota hai. Jo French say aaya hai. Us main is ka talafuz lutana aur meaning feudal lord k hain. Lakin English/ Urdu is ko apni sahoolat k mutabik istimaal krtay hain.
    Shuria
  • Kia "zaban" jo ism e lisan ko taur par istimal hota hai. Us ka faseeh ra'ij talafuz "zuban" hay ? Paishgee shukria !
  • عثمان صاحب، زُبان اور زبان دونوں رائج اور فصیح ہیں۔

  • Thank you Zafar sb
  • کافِر
    کافَر
    دونوں طرح فصیح ہے
  • کافَر بولنے پر زیادہ کافِر لگتا ہے

    ع آخر گناہگار ہوں کافَر نہیں ہوں میں
  • Ye to bahot zati qism ka maamla hay.keh kissi ko kafir ziyada zor daar lagta hai aur kissi ko kafar.
  • Ahl e forum kia lafz "lughat" (dictionary) muzakar hai ya mo'anas ?
    Shukria
  • لفظ لغت فرہنگ یا ڈکشنری کے معنی میں مذکر یا مونث دونوں طرح بولا جاتا ہے

  • ہَرن
    ہِرن
    دونوں طرح فصیح ہے

  • وَحدت۔ وِحدت؛ خَضرا، خِضرا

  • اسی طرح خضر جنھیں
    Khizr
    اور
    Khizar
    ونوں طرح سے بولا جاتا ہے۔ اس میں سے پہلے تلفظ کی مثال

    ض ساکن
    کیا کیا خضر نے سکندر سے
    اب کسے رہنما کرے کوئی۔۔۔ غالب

    ض پر زبر
    اپنی جیبوں سے رہیں سارے نمازی ہشیار
    اک بزرگ آتے ہیں مسجد میں خضر کی صورت ۔۔۔ مولانا حالی

  • لفظ مسالہ اور مصالحہ دونوں طریقوں سے لکھا جاتا ہے۔ لیکن میرے خیال میں لفظ مصالحہ کے معنی وہ نہیں ہیں جو مسالہ کے ہیں۔ اردو میں مصالحت، مصلح وغیرہ کے الفاظ زیر استعمال ہیں اس لیے یہ میری ناقص رائے ہے کہ مسالہ لکھنا زیادہ بہتر ہے۔ اسی ویب سائٹ پر ایک جگہ میں نے مصالحوں لکھا ہوا دیکھا ہے۔ براہِ کرم میری اصلاح فرمائیں۔

  • منظور صاحب، اردو میں مصالحہ صدیوں سے ’سالن کے لوازمات‘ کے معنی میں استعمال ہوتا ہے۔ کسی بھی جنرل سٹور میں جا کر دیکھ لیں کہ وہاں مصالحوں کے ڈبوں پر کیا املا لکھی ہوئی ہے۔

    آپ کو زحمت سے بچانے کے لیے ایک تصویر حاضر ہے:

    http://gomart.pk/image/cache/data/incoming/shan-biryani-masala-50gm-gomart-pakistan-4047-500x500.jpg

    ہمارا خیال ہے کہ زبان وہ چیز ہے جس کا چلن ہو، نہ کہ وہ جو کتابوں اور ڈکشنریوں میں ماہرینِ لسانیات نے تجویز کیا ہو۔

    مصالحہ اس قدر مستعمل ہے کہ اسے کسی صورت میں غلط قرار نہیں دیا جا سکتا۔

  • مصالحہ عربی زبان کا لفظ ہے جس کا مادہ ، ص ل ح ، ہے۔اس مادہ کے معنی ہیں، کسی خرابی ،نقص یا کمی کا دور ہونا۔توازن پیدا ہونا۔ اصلاح ہونا۔ اور یہ لفظ فساد کی ضد ہے،جس کے معنی ہیں توازن کا بگڑ جانا،درست ترتیب کو الٹ دینا۔
    درج ذیل الفاظ اسی مادہ سے بنے ہیں۔
    اصلاح؛ درستی ،نقص دور ہونا
    صُلح؛ امن وامان، دوستی
    صالح؛موزوں، نیک چلن
    اعمال صالح؛ایسے اعمال جن سے شخصیت اور معاشرے مین حسن و توازن پیدا ہو
    اصطلاح؛ کسی لفظ یا چیز کے ایک طریقہ پر استعمال یا اس کے خاص معنی کسی علم یا فن کے ماہرین یا جماعت نے مقرر کیے ہوں۔
    مصطلح؛ اصطلح کیا ہوا
    مصلح؛اصلاح کرنے والا
    مصالحت؛آپس میں صلح کرنا
    مصلح؛اصطلاح طب میں ضرر سے بچانے والا
    مصالحہ؛ سالن کے لوازمات یاجڑی بوٹیاں جو سالن بناتے وقت شامل کرتے ہین،کہ وہ غذا کے مضر اثرات کی اصلاح کریں اور ذائقے کو محفوظ رکھیں،یعنی غذائیت کا توازن برقرار رکھیں۔
    مثلا گوبھی یا بڑا گوشت بادی ہوتے ہیں ان میں پکاتے وقت ادرک اور کالی مرچ شامل کر لیتے ہیں جس سے اس کے مضر اثر کی اصلاح ہو جاتی ہے، تو یہ لوازمات یا جڑی بوٹیاں (مصالحہ جات ) ان غذائی اجزا کی مصلح کہلاتی ہیں۔یعنی اصلاح کرتی ہیں۔
    لفظ مسالا عربی مصالح سے ہی مورد ہے۔
    اصل لفظ مصالحہ ہی ہے جس کا مطلب ہوا، اصلاح کرنے والا
    حکیموں اور ماہرین مطبخ نے طویل تجربے کے بعد ایسے مصالحہ جات تیار کیے جو نہ صرف کھانے کی اصلاح کرتے ہیں بلکہ ایک دوسرے کے نقصانات کا ازالہ کرتے ہیں۔

  • شاہین صاحب، بہت معلوماتی پوسٹ ہے جس سے کئی چیزوں کا پہلی بار انکشاف ہوا۔

    مصالحہ کا ایک اور مطلب تعمیرات میں استعمال ہونے والا جزو ہے جو اینٹ پتھر کو جوڑ کر رکھتا ہے۔ آپ کے بیان کردہ معانی سے اس استعمال پر بھی خاطر خواہ روشنی پڑتی ہے۔

    اس پوسٹ کے لیے بہت بہت شکریہ۔

سائن ان یا رجسٹر تبصرہ کرنے کے لئے۔