The way you access our dictionary content is changing.

As part of the evolution of the Oxford Global Languages (OGL) programme, we are now focussing on making our data available for digital applications, which enables a greater reach in delivering and embedding our language data in the daily lives of people and providing more immediate access and better representation for them and their language.

Because of this, we have made the decision to close our dictionary websites.
Our Oxford Urdu living dictionary site closed on 31st March 2020, and this forum closed with it.

We would like to warmly thank everyone for your participation and support throughout these years – we hope that this forum, and the dictionary site, have been useful
You were instrumental in making the Oxford Global Languages initiative a success!

Find out more about what the future holds for OGL:
https://languages.oup.com/oxford-global-languages/

دوائی یا دوا؟

بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ لفظ دوائی کہنا یا لکھنا غلط ہے، اصل لفظ دوا ہے اور ایسے ہی بولا/لکھا جانا چاہیے۔ آپ کا کیا خیال ہے، کیا دوائی غلط ہے؟

تبصرے

  • اردو میں وقت کے ساتھ ساتھ پرانے اسما اور مصادر سے نئے الفاظ بنانے کا رجحان کسی بھی زندہ زبان کی طرح حوصلہ افزا حد تک موجود ہے۔کسی نئے لفظ کو رد کرنے کے لیے کسی مضبوط دلیل کا ہونا ضروری ہے۔یا تو وہ لفظ بنیادی قواعد کے خلاف ہو یا خلاف جمالیات ہو۔ہم نے عجز سے عاجزی بنایا ہے تو دوا سے دوائی میں کوئی حرج نہیں۔جب کہ بعض اوقات جو مفہوم لفظ دوائی ادا کرتا ہے وہ لفظ دوا ادا نہیں کرتا ۔دوائی میں ایک طرح کی تصغیر بھی پائی جاتی ہے جو اسے دوا کے باقی مفاہیم سے ممتاز کرتی ہے

  • راضی صاحب، کسی نئے لفظ کو رد کرنے کے لیے ایک ہی دلیل کافی سمجھی جاتی ہے کہ وہ مستعمل نہیں، یا اہلِ زبان کی زبان پر نہیں۔ جو لفظ عوام کی زبان پر چڑھ جائے تو پھر ساری دلیلیں دھری کی دھری رہ جاتی ہیں۔ دنیا کی تمام زبانیں اسی طریقے سے آگے بڑھتی ہیں۔ ورنہ اگر زبان کی صحت پر اصرار کیا جائے تو زبان فاسل بن کر رہ جآئے گی۔

سائن ان یا رجسٹر تبصرہ کرنے کے لئے۔