شیل سلور اسٹائن کی نظم کا اردو ترجمہ

April 22 کو ترمیم کیا میں ترجمے
جھولا کون کھلائے
از محمد خلیل الرحمٰن
(شیل سلوراسٹائن کی نظم کا ترجمہ)

دادی نے جھولا بھیجا ہے
اور ہوا بھیجی ہے خدا نے!
جھولا جھولنے بیٹھی ہوں میں
کون جھلائے کوئی نہ جانے!


​Grandma sent the hammock,
The good Lord sent the breeze.
I'm here to do the swinging ____
Now, who's gonna move the trees?
Shel Silverstien

تبصرے

  • خلیل صاحب، آپ کا ترجمہ تو بہت خوب ہے، البتہ ایک دو باتیں عرض ہیں۔ امید ہے آپ ان پر غور فرمائیں گے۔

    پہلی بات تو یہ کہ آپ کی نظم وزن میں نہیں ہے، اسے بڑی آسانی سے وزن میں کیا جا سکتا ہے۔ بس تھوڑی کوشش کی ضرورت ہے۔

    دوسری بات یہ ہے کہ انگریزی نظم کی آخری سطر ہے

    Now, who's gonna move the trees?

    آپ نے اس کا ترجمہ کیا ہے

    کون جھلائے کوئی نہ جانے

    میرے خیال سے یہ درست نہیں ہے کہ شاعر نے درختوں کے جھولنے کی بات ہے۔ اگر اسے بھی تبدیل کر کے یہاں درخت ڈال دیے جائیں تو بہتر ہو گا۔

    امید ہے آپ تنقید کا برا نہیں منائیں گے

    :)

سائن ان یا رجسٹر تبصرہ کرنے کے لئے۔